Home » Pakistani Columns » Javed Chaudhry » اللہ رحم کرے – جاوید چودھری

اللہ رحم کرے – جاوید چودھری

میں نے ان سے پوچھا ’’آپ لوگ کیا کرناچاہتے ہیں‘‘ وہ ہنس کر بولے ’’ہم ملک کھولنا چاہتے ہیں‘‘۔

رات کا وقت تھا‘ مارگلا روڈ پر سناٹا تھا‘ اکا دکا گاڑیاں آ جا رہی تھیں‘ اپریل کا مہینہ اسلام آباد کے لیے ہمیشہ مہربان ہوتا ہے‘ جاتی سردیاں آتی گرمیوں میں گھل رہی ہوتی ہیں اور ان گھلتے موسموں میں بہار کی خوشبو تیرنے لگتی ہے‘ خوشبو اس وقت بھی تیر رہی تھی‘ ہم فٹ پاتھ پر واک کر رہے تھے‘ کورونا کا خوف شہر کی تمام رونقیں نگل گیا تھا‘ روڈ پر پولیس ناکوں اور سناٹے کے سوا کچھ نہیں تھا اور ہم اس سناٹے میں فٹ پاتھ پر چلتے چلتے جا رہے تھے‘ وہ سارا دن کابینہ کے اجلاس میں رہے تھے‘ میں نے ان سے پوچھا ’’وزیراعظم کیا کرنا چاہتے ہیں‘‘ وہ ہنس کر بولے ’’یہ لاک ڈاؤن ختم کرنا چاہتے ہیں۔

ملک کھولنا چاہتے ہیں‘‘ میں نے پوچھا ’’لاک ڈاؤن کب تک ختم ہو جائے گا‘‘ وہ بولے ’’یہ 14 اپریل کے بعد نرم ہونے لگے گا اور آہستہ آہستہ ختم ہو جائے گا بس اسکولز‘ کالجز‘ یونیورسٹیاں اور بڑے دفتر نہیں کھلیں گے‘ مارکیٹیں بھی جلد بند کرا دی جائیں گی‘‘ میں نے پوچھا ’’لیکن اس سے تو کورونا پھیل جائے گا‘‘ وہ بولے ’’ہمیں بھوک یا بیماری دونوں میں سے کسی ایک کا فیصلہ کرنا ہوگا اور حکومت نے بیماری قبول کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے‘ وزیراعظم سمجھتے ہیں ہم ساری آبادی کو گھر بٹھا کر نہیں کھلا سکتے چناں چہ ملک کھول دیں۔

جو بیمار ہوتے ہیں انھیں ہونے دیں‘ باقی کو کام کرنے دیں‘‘میں نے کہا ’’لیکن اس سے تو بے شمار لوگ مر جائیں گے‘‘ وہ رکے‘ لمبا سانس لیا اور بولے ’’ہاں لیکن ہمارے پاس کوئی دوسرا آپشن نہیں لہٰذا ہم سوچ رہے ہیں جو مرتا ہے اسے مرنے دیں باقی کو بچا لیں‘ لوگ بیمار ہو کر‘ مر مر کر خود ہی سمجھ دار ہو جائیں گے‘ یہ خود ہی پرہیز شروع کردیں گے‘ حکومت میں کیپسٹی نہیں‘‘ وہ خاموش ہو گئے‘ میں بھی خاموش ہو گیا‘ ہم دونوں بڑی دیر تک چپ چاپ چلتے رہے۔حکومت کی پالیسی کلیئر ہے‘ یہ زیادہ دیر تک ملک بند نہیں رکھ سکے گی‘ یہ آہستہ آہستہ لاک ڈاؤن کھول دے گی‘ عوام چند دنوں میں گلیوں‘ بازاروں اور دفتروں میں ہوں گے‘ یہ آزادی ملک میں خوف ناک تباہی لے کر آئے گی‘ ہم اگر آج بھی ٹیسٹ کرنا شروع کر دیں تو ملک میں کورونا کے دس بارہ لاکھ مریض نکل آئیں گے‘ یہ تعداد لاک ڈاؤن کھلنے کے بعد کروڑ تک چلی جائے گی‘اگر قدرت نے اس دوران مہربانی فرما دی یا پھر یورپ اور امریکا نے وائرس کا کوئی حل تلاش کر لیا تو ہم بچ جائیں گے ورنہ ہمیں ذہنی طور پر تباہی کے لیے تیار ہو جانا چاہیے۔

کل کا دن ہمارے لیے کیا لے کر آتا ہے یہ ہم کل پر چھوڑدیتے ہیں لیکن کورونا کی اس وبا نے دنیا میں چند نئے اسٹینڈر ضرور سیٹ کر دیے ہیں‘ دنیا میں بے شمار نئے رجحانات اور ویلیوز سامنے آئی ہیں‘ مثلاً جاپان کورونا کا شکار ہونے والا تیسرا ملک تھا‘ چین کے بعد تھائی لینڈ میں مریض سامنے آئے تھے اور پھر جاپان میں دھڑا دھڑ مریض سامنے آنے لگے‘ دنیا میں سب سے زیادہ بزرگ جاپان میں ہیں‘ جاپان میں سو سال سے زائد عمر کے 70ہزار لوگ ہیں‘ آپ ستر سے سو سال کے درمیان لوگوں کی تعداد کا اندازہ خود لگا لیجیے‘ دنیا کا خیال تھا یہ تمام لوگ انتقال کر جائیں گے لیکن نتیجہ حیران کن نکلا‘ جاپان میں صرف سات ہزار 3 سو 70مریض سامنے آئے اور 123ہلاکتیں ہوئیں‘ ملک بڑی تیزی سے کورونا سے ریکور بھی کر گیا‘ کیوں؟ وجہ دل چسپ ہے‘ جاپانی دوسری جنگ عظیم کے بعد سے ماسک پہنتے آ رہے ہیں۔

جاپانیوں کی عادت ہے یہ ماسک کے بغیر ہجوم میں نہیں جاتے‘ دوسرا یہ دوسروں سے ہاتھ نہیں ملاتے‘ جھک کر ایک دوسرے کو سلام کر لیتے ہیں‘ تیسرا یہ جوتے لے کر گھروں میں داخل نہیں ہوتے‘ چوتھا‘یہ جڑی بوٹیوں کا سوپ پیتے ہیں اور پانچواں یہ حکومت کی ہر وارننگ پر مذہب کی طرح عمل کرتے ہیں چناں چہ کورونا آیا اور جاپان کا کچھ بگاڑے بغیر واپس چلا گیا‘ دوسری مثال مراکو ہے‘ میں مراکش کے لوگوں کا مداح ہوں‘ ہمارا ہم خیال گروپ بھی مراکوجاتا رہتا ہے لیکن یہ لوگ اتنے سمجھ دار اور ڈسپلنڈ ہوں گے میں نہیں جانتا تھا‘آپ مراکو کا کمال دیکھیے‘ 2 مارچ 2020 کو مراکو میں کورونا کا پہلا مریض دریافت ہوا‘ حکومت نے اس کے ساتھ ہی ہوٹلوں کے آٹھ ہزار کمرے آئسو لیشن روم بنا دیے‘ پورے ملک کی گارمنٹس فیکٹریوں اور درزیوں کو ماسک بنانے پر لگا دیا‘ملک میں ہر شخص کے لیے ماسک لازم قرار دے دیا‘ ملک میں فری ماسک تقسیم کرا دیے۔

ملک بھر کے کلینکس کو کورونا کلینکس میں تبدیل کر دیا‘ طبی عملے کے لیے پٹرول اور فون فری کر دیا‘ فارما سوٹیکل کمپنیوں کے ٹیکس ختم کر دیے‘ بینک 24 گھنٹے کھول دیے‘ دن میں تین بار محلوں سے گند اٹھانا شروع کر دیا‘ ہر گلی کے موڑ پر فوج کے دو جوان تعینات کر دیے اور فارمیسیز 24 گھنٹے کھول دیں‘ حکومت نے تین دن میں عوام سے تین اعشاریہ دو بلین ڈالر بھی اکھٹے کر لیے چناں چہ مراکو نے ایک ماہ میں کورونا پر قابو پا لیا‘ میں آپ کو یہاں اسرائیل کی مثال بھی دوں گا‘ اسرائیل بھی کورونا سے بری طرح متاثر ہوا‘ اس وقت وہاں 11 ہزارایک سو 45 مریض ہیں‘ ایک ہزار چھ سو 27 لوگ مر چکے ہیں جب کہ 131 وینٹی لیٹرز پر ہیں‘ ملک لاک ڈاؤن سے گزر رہا ہے۔

اسرائیل ایسی صورت حال کے لیے تیار نہیں تھا لہٰذا اس کے پاس ماسک ہیں‘ سینی ٹائزر زہیں اور نہ ہی وینٹی لیٹرز‘ یہ جن ملکوں سے یہ آلات خرید سکتا تھا وہ خود یہ آلات تلاش کرتے پھر رہے ہیں لہٰذا اسرائیل نے اس مشکل گھڑی میں ترکی سے مدد کی اپیل کر دی اور آپ یہ جان کر حیران ہوں گے ترک صدر طیب اردگان نے نہ صرف یہ درخواست قبول کر لی بلکہ ترکی نے اسرائیل کو امدادی سامان کے جہاز بھی بھجوانا شروع کر دیے ہیں‘ کورونا نے فرانس میں بھی خوف ناک تباہی پھیلائی‘ ایک لاکھ 32 ہزار 6سولوگ بیمار ہیں‘ 14 ہزار 4 سولوگ مر چکے ہیں‘ روزانہ ہزار سے زائد لاشیں اسپتالوں سے نکلتی تھیں لیکن اب فرانس نے بھی ریکور کرنا شروع کر دیا ہے۔

اموات کی تعداد روزانہ630 تک آ گئی ہے‘ فرنچ حکومت کا خیال ہے 5 مئی کے بعد لاک ڈاؤن نرم کر دیا جائے گا‘ فرانس نے کورونا کیسے کنٹرول کیا؟ صرف لاک ڈاؤن سے‘ صبح دس سے لے کر شام سات بجے تک ملک میں کرفیو ہوتا تھا چناں چہ بیماری کی پیک آئی اور یہ اب ڈاؤن ہو رہی ہے‘ اسپین اور برطانیہ کے حالات بھی مسلسل خراب ہیں‘ جرمنی بھی دلدل میں دھنستا جا رہا ہے جب کہ امریکا تاریخ کے بدترین دور سے گزر رہا ہے‘ صدر ٹرمپ خود اپنے منہ سے کہہ رہے ہیں ہم نے اگر ہلاکتوں کو ایک لاکھ پر روک لیا تو یہ معجزہ ہو گا‘ دنیا میں صرف سویڈن واحد ملک ہے جس نے کورونا کے باوجود لاک ڈاؤن نہیں کیا۔

لوگ بھی مر رہے ہیں اور ملک بھی کھلا ہے‘ سویڈن میں ساڑھے دس ہزارلوگ بیمار ہیں‘ 9 سومر چکے ہیں اور مریضوں کی تعداد میں روزانہ اضافہ ہو رہا ہے لیکن حکومت اس کے باوجود لاک ڈاؤن نہیں کر رہی‘کیوں؟ شاید سویڈن کی حکومت اور عوام دونوں کے اعصاب مضبوط ہیں یا پھر وہاں عمران خان کی حکومت ہے! میں آپ کو یہاں یہ بھی بتاتا چلوں سعودی عرب چین کے بعد دنیا کا دوسرا ملک ہے جس نے کورونا پر قابو پا لیا‘ وجہ کرفیو ہے‘ سعودی حکومت نے طواف بھی بند کر دیا تھا اور مسجد نبوی کے دروازے بھی مقفل کر دیے تھے چناں چہ سعودی عرب بھی بچ گیا اور پوری اسلامی دنیا بھی‘ سعودی حکومت اگر یہ نہ کرتی تو شاید کورونا اس وقت تک پوری اسلامی دنیا میں تباہی پھیلا چکا ہوتا۔

یہ بیماری اس وقت کھلی کتاب ہے‘ مغربی اور جدید دنیا بے بس ہو چکی ہے‘ لاشیں دفنانے کے لیے جگہ نہیں مل رہی‘ امریکا میں لاشیں ہفتہ ہفتہ اسپتالوں میں پڑی رہتی ہیں‘ اجتماعی قبریں بھی بن رہی ہیں اور جنازے بھی اور کفن بھی ختم ہوتے جا رہے ہیں‘ دنیا اب تک سوشل ڈسٹینسنگ کے علاوہ اس کا کوئی حل نہیں نکال سکی‘ دوسروں سے چھ فٹ فاصلہ رکھیں‘ ماسک پہنیں‘ پندرہ منٹ بعد صابن یا سینی ٹائزر سے ہاتھ صاف کریں‘ ہوا میں چھینک نہ ماریں‘ کھانسی سے پرہیز کریں ‘ دوسروں کے ساتھ ہاتھ نہ ملائیں اور گلے نہ ملیں‘ دنیا میں اب تک ان کے علاوہ کوئی حل‘ کوئی علاج دریافت نہیں ہوا لیکن سوال یہ ہے کیا ہم یہ کر رہے ہیں؟

ہر گز نہیں‘ ہم دنیا کی دل چسپ ترین قوم ہیں‘ ہم خود کو بہادر ثابت کرنے کے لیے گلیوں میں کھڑے ہو کر کورونا کو آوازیں دے رہے ہیں‘ ہم ایسے لوگ ہیں ہمیں اگر بتایا جائے حکومت باہر نکلنے والوں کو گولی مار دے گی تو ہم یہ چیک کرنے کے لیے کہ کیا واقعی حکومت گولی مار دیتی ہے باہر نکل جائیں گے‘ یہ ہماری ذہنی حالت ہے اور اس ذہنی حالت میں حکومت لاک ڈاؤن ختم کرنا چاہ رہی ہے‘ یہ ملک کھول رہی ہے‘ اللہ خیر کرے‘ ہمارے آنے والے دن خیریت کے ساتھ طلوع ہوتے نظر نہیں آ رہے کیوں کہ ہم لوگ جب تک مر نہ جائیں ہمیں اس وقت تک موت کا یقین بھی نہیں آتا‘ اللہ اس ملک پر رحم کرے۔

Check Also

#paksa #paksa.co.za ملاقات ۔۔ ہارون الرشید