Home » Pakistani Headlines » تحریک انصاف کے 11 نکات کا اعلان ،اپنی قوم کے لئے خون کے آخری قطرے تک لڑوں گا:عمران خان

تحریک انصاف کے 11 نکات کا اعلان ،اپنی قوم کے لئے خون کے آخری قطرے تک لڑوں گا:عمران خان

لاہور(پاکستان)پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خا ن نے آئندہ عام انتخابات کے لئے پارٹی کے 11نکات کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ میں نے جب بھی اپنی قوم کوبلایا،اِنہوں نے مجھے مایوس نہیں کیا،میں بھی خون کے آخری قطرے تک اپنی عوام کے لئے لڑوں گا۔

تفصیلات کے مطابق مینار پاکستان لاہور میں تاریخی عوامی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے آئندہ انتخابات کے لئے پاکستان تحریک انصاف کے 11 نکات کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ موجودہ پاکستان قائدؒ اور اقبالؒ کا پاکستان نہیں ،قائد اعظمؒ ایساپاکستان چاہتے تھے جس میں سب کوحقوق حاصل ہوں،قائداعظم کی سوچ تھی کہ پاکستان میں سب برابر کے شہری ہوں گے،مقروض ملک آزادی کھو بیٹھتا ہے، قرضہ دینے والا ملک آپ کو حکم دیتا ہے، فتح کیے بغیر وہ ملک آپ کو غلام بنادیتا ہے،ہمارے نبی حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم دنیا کے عظیم لیڈر تھے جنہوں نے مدینہ میں دنیا کی پہلی فلاحی ریاست بنائی تھی،حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا تھا کہ قانون سب کیلئے سب برابر ہوں گے، مدینہ کی ریاست کی وجہ سے مسلمان دنیا کی عظیم قوم بنے اور 700 سال تک دنیا کی سپر پاور رہے،جب طاقتور غریب کے لیے الگ قانون ہو تو قومیں برباد ہوجاتی ہیں، نبی پاکﷺ مدینہ کی ریاست میں میرٹ کا نظام لےکر آئے،

ہمارے ملک نے بھی مدینہ کی ریاست کی طرح ماڈل اور دنیا میں مثالی ملک بننا تھا ،جہاں رحم اور جس کی بنیاد ہی انصاف پر رکھی گئی تھی لیکن جس طرح کا یہ پاکستان بن چکا ہے، یہ علامہ اقبالؒ کا خواب اور قائدِ اعظمؒ کی تعبیر نہیں تھی،ہم آج تباہی کی طرف جا رہے ہیں،قائدِاعظمؒ جو پاکستان چاہتے تھے اس میں سب کے حقوق تھے، اْس پاکستان میں اقلیتوں کے حقوق برابر تھے،کدھر قائدِاعظمؒ اور کہاں موجودہ لیڈرز، قائدِاعظمؒ کے مخالف بھی انہیں صادق اور امین کہتے تھے کیونکہ وہ ہندوستان میں ایک آزاد لیڈر تھے لیکن آج حالات یہ ہیں کہ پاکستان کے وزیرِاعظم کی امریکی ایئرپورٹ پر تلاشی لی جاتی ہے،ماضی میں پاکستان کی بیرون ممالک عزت تھی، ایوب کے دور میں پاکستان کو عزت سے دیکھا جاتا تھا لیکن آج اس ملک کے وزیراعظم کو امریکا کے صدر کے ساتھ بات کرنے کی ہمت نہیں ہے،وزیرِاعظم شاہد خاقان عباسی کی امریکا میں تلاشی شرمناک ہے،اگر ہمارے ملک کے وزیرِاعظم کا یہ حال ہوتا ہے تو عام پاکستانیوں کے ساتھ کیا سلوک ہوتا ہوگا؟۔

انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کی حکومت آئی تو  ملک میں تعلیم ،انصاف ،ٹیکس کا بہترین نظام متعارف کروائیں گے,پاکستان کا قرضہ گزشتہ 60سالوں میں6 ہزارتھا,1990 تک پاکستان برصغیر میں سب سے تیزی سے ترقی کررہا تھا، 60 سال کی تاریخ پر 6000 ارب روپے قرض تھا، 2008 سے 2013 تک پاکستان کا قرضہ 13ہزار ارب تھا ،پھر ن لیگ کی حکومت آئی تو یہ قرضہ 27 ہزارارب تک جا پہنچا،ہم تباہی کی طرف جارہے ہیں، ہم قرضے واپس کرنے کے لیے قرضے لے رہے ہیں،ہمارے پاس یہ قرضے دینے کے لئے پیسے نہیں ہیں ،جس کانتیجہ یہ ہوگا کہ ملک میں مہنگائی بڑھے گی ،ملک میں پہلے ہی غربت ہے تو ہم نئے ٹیکسز کیسے دیں گے؟.

پاکستان تحریک انصاف کے 11نکات بیان کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ سب سے پہلے ہم تعلیم کے اوپر کام کریں گے،دنیا میں کوئی ملک ترقی نہیں کرسکا جس نے تعلیم پر زور نہیں دیا، سارے ایشین ٹائیگرز نے اپنے بچوں کو تعلیم دیکر ترقی حاصل کی ،پاکستان میں 8 لاکھ بچے انگلش میڈیم سکولوں میں ہیں جبکہ سوا تین کروڑ سرکاری سکولوں میں پڑھتے ہیں جبکہ 25 لاکھ بچے مدارس میں پڑھ رہے ہیں،جرمنی اور جاپان کی حکومتوں نے عالمی جنگ دوئم کے بعد انسانوں پر وسائل خرچ کئے،حکومت میں آنے کے بعد وہ یکساں تعلیمی نصاب متعارف کروائیں گے۔دوسرا نکتے کے حوالے سے ان کا کہنا تھا انصاف کا نظام لائیں گے جس میں ہر کسی کو برابری کے حقوق ملیں گے ،کے پی میں چیف جسٹس کے ساتھ مل کر فیصلہ کیا ہے کہ سول کیس ایک سال سے زیادہ نہیں جائے گا، کے پی میں ریٹائرڈ جج، فوجی اور بیوروکریٹ بیٹھ کر فوری فیصلے کرتے ہیں وہی نظام پورے پاکستان میں لائیں گے،میرٹ لے کر آئیں گے اور پولیس میں اصلاحات لائیں گے اور پولیس کو غیرسیاسی کریں گے اور ایک دن لوگ کہیں گے کہ پنجاب پولیس زندہ باد۔

عمران خان کا اپنے تیسرے نکتے کے حوالے سے کہنا تھا کہنواز شریف چیک اپ کروانے لندن چلا جاتا ہے، ان لوگوں کا کیا ہوتا ہے جو غریبی کی وجہ سے یہیں علاج کروانے پر مجبور ہیں؟ شوکت خانم میں 75 فیصد مریضوں کا علاج مفت میں ہوتا ہے،ہم ملک بھر میں صحت کا شفاف نظام لائیں گے،ہم ایسے ہسپتال بناکر دکھائیں گے کہ غریب کو پیسے نہ ہونے کی فکر نہیں ہوگی،پختونخوا کے 70 فیصد خاندانوں کے لیے ہیلتھ کارڈ کی سہولت موجود ہے ،غریبوں کو انشورنس دیں گے،سارے پاکستان کے لیے ہیلتھ کارڈ لے کر آئیں گے۔چوتھے نکتے کے حوالے سے عمران خان کا کہنا تھا کہہمارے پاس ملک چلانے کے لیے پیسہ نہیں ہوتا اور ہم قرضوں میں ڈوبتے چلے گئے ہیں، ہم ملک کو قرضوں سے نجات دلائیں گے،یہ بڑی فراخ دل قوم ہے ،انہیں اعتماد ہوجائے تو پیسے دیتے ہیں،اپنی عوام سے قرضوں کا پیسہ اکٹھا کرکے دکھا?ں گا، یہاں بہت سے لوگ ہیں جو یہ کام آسانی سے کر سکتے ہیں ،قوم بڑے دل کی مالک ہے ان کو یقین دلا دیں کہ آپ کا پیسہ چوری نہیں ہوگا تو یہ آپ کو پیسے دیں گے۔عمران خان نے دعوی کیا کہ وہ آٹھ ہزا ر ارب روپے ایک سال میں اکٹھا کرکے دکھائیں کریں گے، ملک سے کرپشن کا خاتمہ کریں گے جب ادارے مضبوط ہوں گے تو اس پر قابو پانے میں مدد ملے گی،جو چوری کا پیسہ ملک سے باہر پڑا ہو ا ہے اسے واپس لے کر آؤں گا۔

پانچواں نکتے کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ ملک میں سرمایہ کاری بڑھائیں گے ،سرمایہ کاروں کو زیادہ سے زیادہ مراعات دیں گے،وزیر اعظم ہاوس میں ایک آفس مختص کریں جہاں سرمایہ کاروں کو مکمل آگا ہی اور ان کی بہترین مدد کی جائے گی۔

چھٹے نکتہ بیان کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ نوجوانوں کے لئے روزگاراورکم آمدن طبقہ افراد کے لئے کے اپنے گھر بنائیں گے ،ہم نوجوانوں کو نوکریاں دیں گے تاکہ بے روزگاری ختم ہوسکے،ہم 50 لاکھ سستے گھر بنائیں گے تاکہ غریب اپنے گھر کا مالک بن سکے،ہری پور کی طرح ہم اسکل اور ٹیکنیکل تعلیم دیں گے تاکہ لوگ روزگار حاصل کرسکیں۔

جبکہ ساتواں نکتہ میں ان کا کہنا تھا کہ  اللہ تعالیٰ نے پاکستان کو بہت خوبصورت ملک دیا ہے، خیبرپختونخوا میں ہم نے غربت سیاحت کی وجہ سے کم کی ،سوئٹزرلینڈ چھوٹا سا ملک ہے لیکن سیاحت کے ذریعے 20 ارب ڈالر کماتا ہے، ہمارا شمالی علاقہ سوئٹزر لینڈ سے کافی بڑا ہے،ہم بھی اپنےملک میں سیاحت کوفروغ دیں گے،کے پی میں ہم نے اس کام میں بہت سارا پیسہ اکٹھا کیا ، ہم سیاحت کے ذریعے لوگوں کو نوکریاں دلوائیں گے،ہر سال چا ر نئے سیاحتی مقامات کھولیں گے۔

ان کاکہنا تھا کہ پاکستان میں کسانوں کا معاشی قتل ہورہا ہے، کسان سارا سال کام کرتا ہے اور پھر اسے اپنی فصل کی مناسب قیمت تک نہیں ملتی ،ہم زراعت میں میں ایمرجنسی لگاکر اس میں اصلاحات لائیں گے،ٹیوب ویل پر سبسڈی دیں گے،کھادیں سستی کریں گے تاکہ کسان خوشحال ہوں, وہ ملک کو شوگر مل مافیا سے نجات دلائیں گے اور جدید فارمنگ متعارف کروائیں گے، سستے قرضے دیں گے۔عمران خان کا کہنا تھا کہ وہ فیڈریشن کے نظام کو مزیدمضبوط منائیں گے ،چھوٹے صوبوں کو ان کے حقوق دیں گے اورجنوبی پنجاب صوبہ کو انتظامی لحاظ سے تقسیم کریں گے ،اس کے علاوہ ہم فاٹا کو کے پی میں ضم کریں گے اور بلدیاتی نظام کو مزید مضبوط کریں گے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ جائیداد میں خواتین کو بھی ان کا حصہ بھی دلائیں گے اور ان کے لئے پولیس میں اصلاحات لاتے ہوئے خواتین کے الگ پولیس سٹیشن بنائیں گے۔ پارٹی سے نکالنے والے ایم پی ایز کا حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ جب تک مجھے خود تسلی نہیں ہوئی کہ انہوں نے پیسے نہیں لیے تب تک ان کے خلاف کوئی ایکشن نہیں لیا،اگر انہیں کوئی اعتراض ہے تو ہمارے پاس آئیں ہم انہیں وہ ویڈیو بھی دکھائیں گے جس میں وہ پیسے گن رہے ہیں،پاکستان مسلم لیگ ن کی طرف سے ’’لاڈلے ‘‘کے طعنے پر ان کا کہنا تھا کہ ہاں میں اپنی ماں کا لاڈلا تھا جوکوئی بھی کام نہیں کرتا تھا۔

 

#paksa

#paksa.co.za

Check Also

اسلام آباد – پاک بھارت کشیدگی کی وجہ سے ایمریٹس ایر لائنز نے پاکستان کے اپنی تمام پروازیں منسوخ کردیں

Emirates cancels Pakistan, Afghanistan flights DUBAI (Reuters) – Dubai’s Emirates airline has canceled all Pakistan …