Home » Interesting News » ’جن لوگوں کے بچے ہوتے ہیں وہ۔۔۔‘ سائنسدانوں کا ایسا انکشاف کہ آپ یہ کام ضرور کریں گے

’جن لوگوں کے بچے ہوتے ہیں وہ۔۔۔‘ سائنسدانوں کا ایسا انکشاف کہ آپ یہ کام ضرور کریں گے

bachay

سٹاک ہوم (نیوز ڈیسک) بچوں کی پیدائش سے لے کر جوان ہونے، تعلیم پانے اور اپنے گھر بسانے تک والدین کے تفکرات ختم ہونے میں نہیں آتے۔ بلاشبہ اولاد کی ذمہ داری بہت ہی بھاری ہے، لیکن قدرت نے اس کے انعامات بھی بہت ہی شاندار رکھے ہیں۔ قدرت کے ایک ایسے ہی انعام کا ذکر سویڈن کے سائنسدانوں نے اپنی تازہ ترین تحقیق میں کیا ہے، جس کے مطابق صاحب اولاد افراد بے اولاد افراد کی نسبت لمبی عمر پاتے ہیں۔

دی میٹرو کی رپورٹ کے مطابق یہ تحقیق سویڈن کے کارولنسکا انسٹی ٹیوٹ کے سائنسدانوں نے کی ہے، جس کے دوران 1911ءسے 1925 کے درمیان جنم لینے والے افراد کی ازدواجی حیثیت اور عمر کے دورانیے کے بارے میں معلومات جمع کی گئیں۔ تحقیق کاروں کا کہنا ہے کہ جن جوڑوں کے ہاں کم از کم ایک بچہ تھا ان میں بیماری اور قبل از وقت موت کی شرح بے اولاد جوڑوں کی نسبت کم تھی۔ 60 سال کی عمر کو پہنچنے والے والدین کے مطالعے سے معلوم ہوا کہ ان کی اوسط عمر بے اولاد جوڑوں کی نسبت واضح طور پر زیادہ تھی۔

 صاحب اولاد مردوں کی عمر بے اولاد مردوں کی نسبت اوسطاً دو سال زیادہ جبکہ صاحب اولاد خواتین کی عمر بے اولاد خواتین کی نسبت اوسطاً ڈیڑھ سال زیادہ پائی گئی۔ اسی طرح 80 سال کے بعد صاحب اولاد افراد کی اوسط باقی عمر 7.77 سال جبکہ بے اولاد معمر افراد کی اوسط باقی عمر سات سال تھی۔
ماہرین کا کہنا ہے کہ شادی شدہ افراد بڑھاپے میں ایک دوسرے کا سہارا بنتے ہیں اور اسی طرح ان کے بچے بھی ان کے لئے مدد اور سہارا بنتے ہیں۔ بڑھاپے میں بچوں کا سہارا دستیاب ہونا نہ صرف ذہنی اطمینان اور راحت کا باعث بنتا ہے بلکہ بہتر معیاری زندگی اور بروقت طبی امداد بھی میسر رہتی ہے۔ ان تمام عوامل کا مجموعی نتیجہ صاحب اولاد افراد کی اچھی صحت اور لمبی زندگی کی صورت میں سامنے آتا ہے۔ اس کے برعکس بے اولاد افراد بڑھاپے میں تنہائی اور مایوسی کا شکار ہو جاتے ہیں اور بیماری کی حالت میں انہیں اچھی دیکھ بھال بھی میسر نہیں ہوتی۔ یہی وجہ ہے کہ ان کی اوسط عمر نسبتاً کم ہوتی ہے۔

 #paksa
#paksa.co.za

Check Also

تیزی سے پیٹ کی چربی پگھلانے والی 4 ورزشیں

دنیا بھر میں جاری لاک ڈاؤن کے دوران اگر آپ کا بھی وزن بڑھ گیا …