Home » Interesting News » دنیا کا نایاب ترین بلڈ گروپ جسے ممبئی بلڈ گروپ کہا جاتا ہے، یہ نام کیوں دیا گیا اور یہ کن لوگوں کا ہوتا ہے؟ جانئے انتہائی دلچسپ معلومات

دنیا کا نایاب ترین بلڈ گروپ جسے ممبئی بلڈ گروپ کہا جاتا ہے، یہ نام کیوں دیا گیا اور یہ کن لوگوں کا ہوتا ہے؟ جانئے انتہائی دلچسپ معلومات

blood

نئی دلی (نیوز ڈیسک) آپ نے B, Aاور Oجیسے بلڈ گروپوں کے بارے میں ضرور سن رکھا ہوگا لیکن کبھی ”ممبئی بلڈ گروپ“ کے بارے میں بھی سنا ہے؟ ہم عموماً سنتے ہیں کہ نیگیٹو بلڈ گروپ بہت کم پائے جاتے ہیں لیکن اگر دنیا کے نایاب ترین بلڈ گروپ کی بات کی جائے تو آپ کو ”ممبئی بلڈ گروپ“ کا نام ضرور سننے کو ملے گا۔
اخبار ٹائمز آف انڈیا کی رپورٹ کے مطابق بلڈ گروپ ABO پچاس سال قبل پہلی دفعہ ممبئی کے ایک شہری میں دریافت ہوا۔ اس انتہائی نایاب بلڈ گروپ کا انکشاف اس وقت ہوا جب ممبئی کے پرلز کے ای ایم ہسپتال میں ایک شخص کو علاج کے لئے لایا گیا اور اسے Oبلڈ گروپ لگائے جانے کی وجہ سے اس کی حالت غیر ہو گئی۔ جب اس معاملے کی تحقیق کی گئی تو حیرت انگیز انکشاف ہوا کہ اس شخص کا بلڈ گروپ کسی ایسی قسم سے تعلق رکھتا تھا کہ جس کی دنیا میں اس سے پہلے کوئی مثال نہیں دیکھی گئی تھی۔ اس بلڈ گروپ میں Hاینٹی جن موجود نہیں ہوتا اور یہی وجہ ہے کہ اس میں بلڈ گروپ A,B,ABاور O کی بنیادی خصوصیات بھی موجود نہیں ہوتیں۔ تحقیق کاروں نے اسے ”ممبئی بلڈ گروپ“ کا نام دیا۔

بھارت میں اس بلڈ گروپ والے کل تقریباً 400 لوگ ہیں۔ نصف صدی قبل دریافت ہونے والے اس انوکھے بلڈ گروپ کے حامل چند لوگ کاکیشیا کے خطے اور جاپان میں بھی ملے ہیں۔ ان لوگوں کو ممبئی بلڈ گروپ کے علاوہ کسی اور بلڈ گروپ کا خون نہیں لگ سکتا، یعنی ان میں سے اگر کسی کو خون کی ضرورت پیش آجائے تو اسے خون دینے کے لئے پوری دنیا میں محض چند سو افراد ہی دستیاب ہوں گے۔

Check Also

کیا سیب نظام ہاضمہ کیلئے مفید ہے؟ #paksa #paksa.co.za

آپ نے یہ جملہ تو ہر ایک سے سُنا ہوگا کہ روزانہ ایک سیب کھائیں …