Home » Interesting News » ’وہ 20 برس تک ہم جنس پرست جوڑے کے طور پر اکٹھے رہتے رہے لیکن جو ذلت موت کے دن ہوئی اس کی کوئی مثال نہیں کیونکہ۔۔۔‘

’وہ 20 برس تک ہم جنس پرست جوڑے کے طور پر اکٹھے رہتے رہے لیکن جو ذلت موت کے دن ہوئی اس کی کوئی مثال نہیں کیونکہ۔۔۔‘

humjins

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکہ میں دو مرد ہم جنس پرست جوڑے کے طور پر 20سال تک اکٹھے رہے مگر جب ان میں سے ایک کی موت ہوئی تو ایسی ذلت کا سامنا کرنا پڑ گیا کہ دنیا میں ہی عبرت کا نشان بن گیا۔ واشنگٹن پوسٹ کی رپورٹ کے مطابق امریکی ریاست مسیسپی میں 82سالہ جیک زواسکی نامی شخص رابرٹ ہسکے کے ساتھ بیس سال سے رہ رہا تھا۔ جب امریکہ میں ہم جنس پرستوں کی شادیوں کو قانونی حیثیت دی گئی تو جیک نے بھی رابرٹ سے2015ءمیں شادی کر لی اوراس کی بیوی بن گیا۔

رپورٹ کے مطابق گزشتہ دنوں رابرٹ کی موت واقع ہوئی گئی لیکن مقامی آخری رسومات کے دفتر نے اس کی میت یہ کہہ کر وصول کرنے سے انکار کر دیاکہ ”وہ تمام عمر ہم جنس پرستی جیسا شرمناک کام کرتا رہا ہے لہٰذا وہ اس کی آخری رسومات ادا نہیں کریں گے۔“جیک نے اب آخری رسومات کے دفتر کی انتظامیہ کے خلاف امتیازی سلوک کرنے کے الزام کے تحت مقدمہ درج کروا رکھا ہے۔ جیک کا کہنا ہے کہ ”ہم جنس پرست ہونے کی وجہ سے ہمیں امتیازی سلوک کا نشانہ بنایا گیا۔ دفتر کی انتظامیہ کی طرف سے اس سلوک پر مجھے انتہائی ذلت کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

#paksa

#paksa.co.za

Check Also

تیزی سے پیٹ کی چربی پگھلانے والی 4 ورزشیں

دنیا بھر میں جاری لاک ڈاؤن کے دوران اگر آپ کا بھی وزن بڑھ گیا …