Home » Interesting News » #paksa #paksa.co.za وہ جنگجومسلمان حکمران خاتون جس نے مغلیہ دور حکومت میں شہنشاہ اکبر کو تگنی کا ناچ نچوادیا تھا

#paksa #paksa.co.za وہ جنگجومسلمان حکمران خاتون جس نے مغلیہ دور حکومت میں شہنشاہ اکبر کو تگنی کا ناچ نچوادیا تھا

لاہور(ایس چودھری )اسلام میں بہت سی نڈر اور سپاہیانہ قیادت سے مالا خواتین کا ذکر خیر ملتا ہے جنہوں نے میدان جنگ میں اپنے سے بھاری فوجوں کو نہ صرف شکست دی بلکہ برسوں تک ان کے نام کا دبدبہ قائم رہا ۔ سولہویں صدی کی ایک ہندوستانی بہادراور زیرک مسلمان حکمران چاند بی بی کا نام بھی بڑے احترام سے لیا جاتا ہے جس کی جنگجویانہ صلاحیتوں نے مغل شہنشاہوں کے تخت و اقتدار کو چیلنج کردیااور مغل شہزادوں کو شکست سے دوچار کردیا تھا ۔رضیہ سلطانہ کی طرح چاند بی بی  کو بھی اسلامی تعلیمات  پر مکمل عبور تھا ۔

چاند بی بی نے 1550 ءکو احمد نگر میں آنکھ کھولی۔اسکے والد حسین نظام شاہ اوّل احمد نگر کے حکمراں تھے۔ 14 سال کی عمر میں اسکا بیاہ بیجا پور کے حکمراں علی عادل شاہ کے ساتھ اس ایما پر ہوا کہ احمد نگر اور بیجا پور کی پرانی دشمنی اور عداوت کو ختم کردیا جائے ۔

چاند بی بی کے والد نے اس کی سپاہیانہ تربیت کی تھی ۔ مغلیہ فوج نے کئی بار احمد نگر کو فتح کرنے کی کوشش کی تھی مگر یہ چاند بی بی تھی جس نے اپنی ذہانت،دلیری اور ہمت سے مغلوں کو منہ توڑ جواب دیا۔چاند بی بی نے فن حرب اور سپہ گری اور گھڑ سواری کی سخت تربیت حاصل کی تھی ۔میدان جنگ میں وہ فوجیوں کے لباس میں ہوتی تھیں۔ ایسی جنگی چالیں چلتی اور بہادری و شجاعت کے ایسے جوہر دکھاتی کہ عظیم جنگی سورماوں کے بھی پیر پھولنے لگتے۔ اکبر کی سلطنت میں احمد نگر شامل نہیں تھا۔ اکبر نے اس اہم قلعہ کو اپنی سلطنت میں شامل کرنے کیلئے شہزادہ مراد کی زیر قیادت بھاری لشکر کو احمد نگر کوچ کرنے کا حکم دیا۔ یہ 1595 کی بات ہے۔ جب شہزادہ مراد بڑے لشکر کے ساتھ احمد نگر پہنچا مگر چاند بی بی نے اس لشکر کا راستہ روک دیا اور ایسی جنگی چالیں چلیں کہ شہزادہ بے نیل ومرام واپس لوٹ گیا پھر دوسرے سال مغل شہزادہ دانیال کی سرکردگی میں مغلوں کی فوج احمد نگر کی تسخیر کیلئے پہنچی مگر اس بار بھی اس عظیم جنگجو خاتون نے مغل فوج کے چھکے چھڑا دےئے۔ اپنی شجاعت اور بہادری سے نہ صرف احمد نگر قلعہ کا کامیابی کے ساتھ دفاع کیا بلکہ مغل فوج کو بے مراد واپس کوچ کرنا پڑا۔ آخر کار اکبر نے 1598ء کو لشکر کے ساتھ خود احمد نگر پہنچا۔ چاند بی بی نے مغل فوج کا بہادری کے ساتھ مقابلہ کیا اور احمد نگر قلعہ کی حفاظت کی۔ اس نے اکبر کو تگنی کا ناچ نچوادیاتھا ۔ اس قلعہ کی تسخیر کیلئے مغل فوج کے تمام جنگی منصوبے ناکام ہوتے دکھائی دے رہے تھے ۔اس کے باوجود اکبر ڈٹا رہا اور اس کے خلاف چاند بی بی بھی عزم و حوصلہ کے ساتھ برابر ڈٹی رہیں۔ اس دوران یہ افواہ پھیلائی گئی کہ چاند بی بی نے مغل فوج سے مفاہمت کرلی ہے۔ یہ افواہ پھیلانے میں خود اس کے امراء اور وزراء ملوث تھے۔ آخر کار 1599ءکووہ منحوس گھڑی آگئی،جب چاند بی بی اپنے محل میں تھی،اس وقت اس کے سپاہیوں کا ایک گروپ محل میں گھس پڑا اور چاند بی بی کو قتل کردیا گیا۔ بتایا جاتا ہی کہ اس غدار گروپ کو قلعہ دار حمید خان کی تائید و حمایت حاصل تھی اس کی غداری اور سازش سے احمد نگر کا قلعہ مغلوں کی فوجوں کے ہاتھ چلا گیا مگر حقیقت میں مغل فوج نے اس قلعہ کو فتح نہیں کیا۔

محقیقین کے مطابق چاند بی بی کو عربی،فارسی،ترکی مراٹھی اور کنڑا پر زبردست عبور تھا۔ ستار بجانے میں اس کا کوئی ثانی نہیں تھا۔ مصوری ان کا پسندیدہ مشغلہ تھا۔ پھولوں کے خاکوں میں رنگ بھرنے میں انہیں ملکہ حاصل تھا۔بھارت میں چاند بی بی کو جرات و ہمت کی علامت سمجھا جاتا ہے ۔اس پر کئی ناول بھی لکھے گئے اور فلمیں بھی بن چکی ہیں ۔

Check Also

#paksa #paksa.co.za چینی انجینئر رائیونڈ سے پسند کی لڑکی بیاہ کر لے گیا

لاہور، رائیونڈ (ویب ڈیسک) چینی انجینئر رائے ونڈ سے پسندکی لڑکی بیاہ لے گیا ،شادی …